Coronavirus updates in Urdu 30

عالمی ادارہ صحت (WHO) نے کرونا وائرس سے متعلق بڑا اعلان کر دیا.

عالمی ادارہ صحت نے اعلان کر دیا ہے کہ کرونا وائرس موسمی بیماری نہیں ہے بلکہ ایک بڑی لہر ہے بہتر یہی ہے کہ اس وائرس کا خاتمہ کر دیا جائے

عالمی ادارہ صحت نے کرونا وائرس کو ایک بڑی لہر قرار دیتے ہوئے شمالی نصف کرہ میں موسم گرما کے دوران وبا کی منتقلی سے متعلق خبردار کیا ہے کہ یہ وائرس انفلوئنزا کی طرح نہیں جو موسمی رجحانات کی پیروی کرے
ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کے عہدیدار مارگریٹ ہیرس نے کہا ہے کہ لوگ تاحال موسموں کے بارے میں سوچ رہے ہیں لیکن ہم سب کو یہ سمجھنے کی ضرورت ہے کہ یہ ایک بالکل نیا وائرس ہے اور یہ مختلف طریقوں سے برتاؤ کر رہا ہے انہوں نے مزید کہا کہ یہ وبا کی پہلی لہر ہے اور یہ ایک بڑی لہر بننے جا رہا ہے اس میں اتار چڑہاؤ آئیں گے اس لیے بہتر یہ ہے کہ اس کو ختم کر دیا جائے انہوں نے امریکہ میں گرمی کے موسم کے باوجود بڑھتے ہوۓ کیسز کی طرف اشارہ کرتے ہوئے وائرس کی سست منتقلی کے لیے اقدامات پر زور دیا ہے اور کہا ہے کہ یہ لوگوں کے بڑے اجتماعات کے زریعے پھیل رہا ہے
مارگریٹ ہیرس نے شمالی نصف کرہ میں سردی کے دوران موسمی انفلوئنزا کے ساتھ کرونا کے کیسز سامنے آنے پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ

اس پر گہری نظر رکھے ہوئے ہے انہوں نے کہا ہے کہ اب تک لیبارٹری نمونوں میں انفلوئنزا کے زیادہ کیسز سامنے نہیں آئے ہیںWorld Heath Organization (WHO)

انہوں نے مزید کہا کہ اگر سانس کی بیماری اس وقت بڑھے کہ آپ پر پہلے ہی سانس کی بیماری کا بہت زیادہ بوجھ ہو تو یہ صحت کے نظام پر اور زیادہ دباؤ ڈالے گا

دوسری طرف دنیا بھر میں کرونا وائرس سے 6 لاکھ 76 ہزار 756 افراد ہلاک ہوئے ہیں 1 کروڑ 74 لاکھ 74 ہزار 691 متاثر جبکہ 1 کروڑ 9 لاکھ 37000 شفایاب ہوئے ہیں برازیل میں 26 لاکھ 13 ہزار 789 متاثر اور 91 ہزار 377 افراد ہلاک ہوئے ہیں جبکہ پڑوسی ملک بھارت میں متاثرہ مریضوں کی تعداد 16 لاکھ 39 ہزار 350 ہو گئی بھارت میں کرونا تیزی سے پھیل رہا ہے ایک ہی روز میں مزید 775 افراد ہلاک ہوئے ہیں 24 گھنٹے کے دوران ریکارڈ 52 ہزار کیسز رپورٹ ہوئیں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں