کراچی کو ’مستقل قومی مصیبت‘ سے آزاد کرائیں گے، بلاول بھٹو 294

کراچی کو ’مستقل قومی مصیبت‘ سے آزاد کرائیں گے، بلاول بھٹو

کراچی کے ضلع وسطی میں پیپلز پارٹی نے 44 برس بعد جلسہ منعقد کیا جس سے خطاب کرتے ہوئے چیئرمین پیپلز پارٹی نے پہلے ایم کیو ایم، پھر تحریک انصاف اور پھر حکمراں جماعت پاکستان مسلم لیگ (ن) پر سخت تنقید کی۔

بلاول بھٹو نے اپنے خطاب میں کہا کہ کراچی کو مستقل قومی مصیبت کے ہر دھڑے سے آزاد کرایا جائے گا، لیاقت آباد میں پہلے نفرت کانعرہ لگایا جاتاتھا، میرے سامنے ان لوگوں کی تصاویر ہیں جنہوں نے شہادت دی۔

چیئرمین پیپلز پارٹی نے کہا کہ ہزاروں شہداء نے ظلم کی فضا میں پیپلز پارٹی کا پرچم تھامے رکھا، پیپلزپارٹی کے ہزاروں شہداء کے لیے نعرہ لگاتا ہوں، یہ وہ کراچی ہے جہاں میں پیدا ہوا‘۔

انہوں نے کہا کہ کراچی میرا گھر ہے، یہ میری سانسوں میں بستا ہے، میری ایک پہچان کراچی شہر بھی ہے۔

بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ ’پہلے مرحلے میں کراچی میں امن قائم کیا ہے، دوسرے مرحلے میں کراچی کو مستقل قومی مصیبت سے نجات دلائیں گے‘۔

چیئرمین پیپلز پارٹی نے کہا کہ ’کراچی میں 35 سالوں میں جو ہوا وہ آپ سب کے سامنے ہے، کراچی میں خون اور دہشتگردی تھی، کراچی کا مسئلہ وہی حل کرسکتا ہے جو یہاں پیدا ہوا ہو‘۔

انہوں نے کہا کہ ’کراچی کی گلیوں سے پیپلزپارٹی کی قیادت نکلی، کراچی والوں کے مینڈیٹ پر بندوق کی زور پر قبضہ کیا گیا، لیکن بھٹو نے کراچی سے محبت کا سلسلہ ترک نہیں کیا، کچھ لوگوں کو کراچی اور بھٹو کا رشتہ پسند نہیں آیا‘۔

 بلاول بھٹو نے کہا کہ ’شہر قائد میں نفرت کے بیچ بوئے گئے، نسلی بنیادوں پر لڑائیاں کرائی گئیں، طاقت کے زور پر پیپلز پارٹی کی طاقت ختم کی گئی، کراچی سے پی پی کو ختم کرنے کے لئے ہزاروں جیالوں کوقتل کیا گیا، گھروں میں گھس کر جیالوں کو گولیاں ماری گئیں، لیکن مخالفین دیکھ لیں، ہم فنا نہیں ہوئے، ہم وہ ہیں جو اپنی راکھ سے دوبارہ پیدا ہوتے ہیں‘۔

چیئرمین پیپلز پارٹی نے مزید کہا کہ ’ آج تیسری نسل کا بھٹو آپ کے سامنے کھڑا ہے، کراچی میں بے امنی مجھے پسند نہیں تھی، کراچی میں ہمارے لوگ جل اور مر رہے تھے، ہم نے الزام کی بجائے کراچی میں امن قائم کیا‘۔

 بلاول بھٹو نے کہا کہ کراچی میں آپریشن کے کپتان وزیراعلیٰ سندھ تھے لیکن جب کراچی میں امن آگیا تو تو ہر کوئی فتح کا جھنڈا لہرا رہا ہے۔

عمران خان اور بانی ایم کیو ایم ایک دوسرے کا عکس ہیں، بلاول

چیئرمین پی ٹی آئی نے کہا کہ کراچی میں جب سے امن آیا ہے ہر کوئی مینڈٹ پر قبضہ کرنا چاہتا ہے، بہت مشکل سے کراچی کو بانی ایم کیو ایم سے نجات ملی ہے اب اس پر کسی اور کو قابض نہیں ہونے دیں گے۔

بلاول بھٹو نے کہا کہ ’پی ٹی آئی شہر میں نفرت پھیلانا چاہتی ہے، ہم بانی ایم کیو ایم کی طرح عمران خان کو بھی نہیں چاہتے، عمران اور بانی ایم کیو ایم ایک دوسرے کا عکس ہیں، ایک ہڑتال کرتا ہے تو دوسرا دھرنا دیتا ہے، ایک تقریر پر معافی مانگتا ہے تو دوسرا یوٹرن لیتا ہے‘۔

انہوں نے کہا کہ ’عمران خان نے اعلان کیا کہ وہ کراچی سے الیکشن لڑیں گے، پہلے لندن، اب بنی گالا سے کراچی چلانے کے خواب دیکھےجارہے ہیں، خان صاحب ! آپ کیا لوگوں کو بے وقوف سمجھتے ہیں؟‘

عمران خان پر تنقید کرتے ہوئے بلاول نے کہا کہ ’پی ٹی آئی بلوچستان کےصدر پر خون کے الزامات ہیں، نیا پاکستان کہاں سے بنے گا؟ نیا پاکستان بنا نہ سکے،اب کہتے ہیں دو نہیں ایک پاکستان چاہیے‘۔

انہوں نے کہا کہ ’5 سالوں میں کے پی کے میں ایک سرکاری اسپتال نہ بناسکے،کے پی کے وزیر اعلیٰ پر کرپشن کا الزام لگا،آپ نےوزراء کو معطل کر دیا‘۔

نواز شریف نے بھی کراچی والوں سے بڑے بڑے وعدے کیے، بلاول

سابق وزیراعظم نواز شریف پر تنقید کرتے ہوئے بلاول بھٹو نے کہا کہ ’نواز شریف نے بھی کراچی والوں سے بڑے بڑے وعدے کیے، لیکن وفاق سے ایک گرین لائن منصوبہ مکمل نہ ہوسکا‘۔

آخر میں بلاول بھٹو نے کراچی کے عوام سے اپیل کی کہ وہ اب کی بار اپنے مینڈٹ کو تقسیم نہ ہونے دیں۔

انہوں نے کہا کہ ’عوام میرے ساتھ ہیں تو اس شہر کی قسمت بدل دوں گا، میں عوام کو مفت تعلیم اور روزگار دوں گا، میں کراچی میں صنعتیں بحال کروں گا، میں کراچی والوں کی پیاس بجھاؤں گا‘۔

کراچی کو ’مستقل قومی مصیبت‘ سے آزاد کرائیں گے، بلاول بھٹوکراچی کو ’مستقل قومی مصیبت‘ سے آزاد کرائیں گے، بلاول بھٹو

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

کراچی کو ’مستقل قومی مصیبت‘ سے آزاد کرائیں گے، بلاول بھٹو” ایک تبصرہ

اپنا تبصرہ بھیجیں